Skip to main content

Bicycle ki Taleem

Bicycle ki Taleem

بائیسکل کی تعلیم

شوکت تھانوی اصل نام محمدعمر
۷۰۹۱ میں بھارت میں پیدا ہوئے اپنے ذاتی شوق سے علم میں اضافہ کرتے رہے۔ صحافت سے دلچسپی کی بنا پر مشہور اخبار ہمدم‘ ہمت اور سر پنچ سے وابستہ رہے اور سر پنچ نے ہی شوکت تھانوی کو مزاح نگاری کی راہ پر ڈالا۔ ان کے مضامین سودیشی ریل اور سودیشی ڈاک آج بھی بڑی دلچسپی سے پڑھے جاتے ہیں۔ ان کے مزاح میں بے تکلفی اور بے ساختگی ہے وہ لفظوں اور محاورون کی موزونیت سے مزاح پیدا کرتے ہیں۔ وہ فطرتاً ظریف ہیں ان کے یہاں طنز کم اور مزاح زیادہ ہے وہ نہیں چاہتے کہ قاری غیر ضروری طور پرطنز کا شکار رہے ۔ وہ ایک باغ و بہار شخصےت تھے یہی وجہ ہے کہ وہ بات سے بات پیدا کرنے کے فن سے آگاہ ہیں اور اپنی معلومات اور مشاہدات سے اپنی تحریروں میں نیرنگی پیدا کرتے ہیں۔ ان کی زبان شگفتہ اور سادہ ہوتی ہے ان کی تحریر کی اسی سادگی نے انھیں مقبول عام و خاص بنایا ہے۔ نصاب میں شامل مضمون بائیسکل کی تعلیم ان کا نمائندہ مضمون ہے جس میں شوق‘ عشق کی حدتک چلا جاتا ہے۔ 
اس مضمون میں نو عمری کی ایک عام سی خواہش اور اس کی تکمیل کیلئے پیش آنے والے واقعات اور مشکلات کو مصنف نے بڑے خوبصورت انداز میں پیش کیا ہے۔ مضمون نگار کو سائیکل چلانے کا شوق جنون کی حد تک تھا تاکہ اس پر سوار ہوکر وہ سیر و تفریح سے لطف اندوز ہو سکے۔ کم عمری کے باعث شرط رکھی گئی کہ وہ پہلے سائیکل چلانا سیکھ لے تو پھر نئی سائیکل خرید کر دی جاسکتی ہے اسھر یہ اصرار تھا کہ سائیکل ہو تو سیکھا جائے ۔ یہ گفت و شنید جاری تھی کہ حسنِ اتفاق سے ایک دن ایک بزرگ سائیکل پر سوار ہوکر گھر پر ملاقات کیلئے تشریف لائے ایسا موقع تو کبھی کبھی ملتا ہے وہ ملاقات میں مصروف رہے اور مصنف نے سائیکل اٹھائی اور سڑک پر آگئے اب تو سائیکل چلانا ہی تھا جو اس پر چڑھنے کی کوشش کی تو حادثات کا ایک سلسلہ شروع ہوگیا۔ 
پہلی بار مصنف سائیکل کے فریم میں الجھ کر گر پڑا پھر کوشش کی تو پھر گرپڑا۔ پھر سوار ہوکر کچھ دور چلا تو مگر توازن برقرار نہ رہا اور سائیکل ایک گدھے سے جا ٹکرائی‘ پھر اٹئا ہاتھ پا
ں جھاڑے اور درخت کے سہارے گدی پر بیٹھا‘ کچھ دور چلاتو پل سے جاٹکرائی اور خود نالے میں گرتے گرتے بچے۔ مگر شوق تو عشق کی حد تک فرواں تھا‘ باز نہ آیا‘ زرا سنبھل کر آگے بڑھا تو سڑک پر گزرنے والی ایک بوڑھی دھوبن سے جا ٹکرایا وہ گالیاں دیتی رہی اور یہ ان کی منت سماجت کرتے رہے بڑی مشکل سے جان چھوٹی۔ اب سوار نہ ہونے کا خیال آیا ہی تھا کہ ہمت کو شناوری مبارک۔ یہ پھر اٹھے اور سائیکل پر جا بےٹھے اتفاقاً ایک بزرگ تسبیح پڑھتے ہوئے چلے جاتے تھے۔ اب کی دفعہ سائیکل ان سے جا ٹکرائی وہ گرے اور یہ ان کے اوپر تھے وہ بزرگ اپنی سادہ لوحی سے سمجھے کہ شاید یہ موت کا فرشتہ ہے اور اس نے آن دبوچا ہے۔ یہ فوراً اٹھے اور ان سے معذرت کرنے لگے وہ بےچارے خاموش رہے اور صرف گھورتے رہے۔ اب جو مصنف نے سائیکل کا جائزہ لیا تو یہ انکشاف ہواکہ سائیکل کا ہینڈل گھوم کر دوسری جانب چلا گیا ہے اور اس کا زاویہ تبدیل ہو گیا ہے اب اس کو سیدھا کس طرح کیا جائے مصنف اس فن سے ناواقف تھا یعنی ہینڈل سیدھا کرنا مشکل تھا لہذا بائیسکل کی یہ تعلیم نامکمل چھوڑ کر مڑی ہوئی سائیکل لیکر گھر پہنچا اب جو گھر والوں نے اس کے ساتھ سلوک گیا وہ ناقابلِ بیان ہے یعنی پھر اس کے بعدچراغوں میں روشنی نہ رہی۔

Comments

Popular posts from this blog

Free Download Notes XI & XII Commerce Notes & Book In Pdf

Free Download Notes XI & 1st Year Notes Download In Pdf XI Accounting Book  Economics Notes Pdf Free Download Urdu Notes for 1st Year (Class 11)  Another Urdu Notes For XI  Islamiat For XI  Principle Of Commerce 1st year XI POC Notes (Best) Server 01 XI POC ( Principle of Commerce ) Guess Paper Solved 2021 Free Download Notes  XII Commerce Notes & Book In Pdf XII Accounts Book With Solutions 2nd-year Urdu Notes Free Download Pdf XII English Notes Pdf 2nd Year English Notes Adam jee  2nd Year Commercial Geography  2nd Year Pak Studies Notes XII Pak Studies Notes In English Adam Jee XII Pak Studies Solved Paper XII Banking Notes (Shah Commerce) Another 2nd Year Banking Notes XII  CG Solved Papers Commerce Online Notes By Sir sultan hamid hussain (All credit goes to Sir Sultan) Server 01 Commercial Geography Notes In English By Sir Sultan Server 01 Commercial Geography Notes Notes In Urdu By Sir Sultan Server 01 XII Banking Notes Short Q

Questions And Answers The Count’s Revenge By J.H.Walsh

THE COUNT’S REVENGE (J.H.WALSH) Q: 1 What Arab custom is referred in the short play “The Count’s Revenge”? An Arab custom mentioned by the Countess of Morcerf to Albert and the Count of Morcerf when the count of Monte Cristo leaves their house without eating anything. The custom runs as “Never to eat food at the house of a deadly enemy”. She strongly believes that since the Count of Monte Cristo has a faith in that custom and thinks them to be his enemy, and hence not eat anything at their place.   Q: 2 What do you know about the reaction, plans or intention of Albert? Albert, the brave young son of the count of Morcerf, was deeply shocked by the disgrace of his father and family. As a man of honour, he showed severe emotional reaction to the unhappy incident. Albert made his mind to trace about the unknown enemy of his family and avenge the family honour. On his request, Beauchamp, a close friend of Albert, discovered the name of the enemy. It was Albert;s

English Essay Problems of Karachi

Problems of Karachi Karachi is the biggest city in Pakistan and one of the most thickly populated cities in the world. Its population has increased rapidly and accordingly has given rise to many social problems. People of this metropolis are becoming more and more concerned about solving these serious problems, some of which are discussed below. The ever-increasing rush of heavy traffic on the roads is resulting in heavy loss of human life. One day or the other, people suffer from accidents due to reckless driving. Some lose their vehicles and some go to the police. This is due to lack of civic sense in the citizens and violation of traffic rules. Traffic jams, road quarrels, untidiness and damage of public property are also the results of this problem. The government has not done any planning to control this situation in the past two decades. In the same manner, the government has never emphasized upon population distribution. As a result, slum areas are rapidly being built, wher

Short Questions Answers of The Prisoner of Zenda ~Drama Novel Prisoner of Zenda

 N OVEL Question 1)Tell in your own words how the first meeting came off between the two distant cousins? Answer) Rudolf leaves the inn one day as he is given an opportunity to stay at Jahan’s sister at Strelsau. Instead of going, he decides to walk through the forest and have a look at the castle of Zenda. He sits down in the forest to have some rest as well as smoke a cigar. After smoking his cigar, he unintentionally falls asleep. Shouts and sound of laughter wake him up. On opening his eyes, he sees two men standing near him. They are Fritz Von Tarlenheim and Colonel Sapt. They tell him that he looks exactly like their king except that he has a beard. At that moment King Rudolf appears. Rassendyll greatly surprises to see king Rudolf in the forest of Zenda. He gives a cry when he finds that Rudolf is just like him. Rudolf’s face and appearance are quite like his own. Rudolf’s height appears to be slightly less than his. Rassendyll bows respectfully before the king. In a happy m